Ask @badakhshani:

Ek Shair Hojaye. 🔥🔥

Sheriyar Malik
ذکر شب فراق سے وحشت اسے بھی تھی
میری طرح کسی سے محبت اسے بھی تھی
مجھ کو بھی شوق تھا نئے چہروں کی دید کا
رستہ بدل کے چلنے کی عادت اسے بھی تھی
اس رات دیر تک وہ رہا محو گفتگو
مصروف میں بھی کم تھا فراغت اسے بھی تھی

مجھ سے بچھڑ کے شہر میں گھل مل گیا وہ شخص
حالانکہ شہر بھر سے عداوت اسے بھی تھی
وہ مجھ سے بڑھ کے ضبط کا عادی تھا جی گیا
ورنہ ہر ایک سانس قیامت اسے بھی تھی

سنتا تھا وہ بھی سب سے پرانی کہانیاں
شاید رفاقتوں کی ضرورت اسے بھی تھی

تنہا ہوا سفر میں تو مجھ پہ کھلا یہ بھید
سائے سے پیار دھوپ سے نفرت اسے بھی تھی

محسنؔ میں اس سے کہہ نہ سکا یوں بھی حال دل
درپیش ایک تازہ مصیبت اسے بھی تھی!
محسن نقوی

View more

Poetry maybe ?

saadia essa
Dekha palat Kay us ne k hasrat usse bhi the
Hum jis par mit Gaye thy Mohabbat usse bhi the
Chup ho gaya tha dakh kar wo bhi idhar udhar
Dunya se meri tarah shekayat usse bhi the
Yai souch kar andheray galay se laga leya
Raaton ko Jaagne ke Aadat usse bhi the
Wo roo diya tha mujh ko pareshan dekh kar
Us din halan k meri zarurat usse bhi the
Un patharon k sath nebhani pari usse
Jin say FaQat muJhe nahe nafrat usse bhi the!!

View more

Next